15 روز میں پہلی بار ڈالر کی قیمت میں کمی

15 روز میں پہلی بار ڈالر کی قیمت میں کمی

انٹربینک میں کاروبار کے اختتام پر ڈالر 57 پیسے سستا ہو کر 239 روپے 37 پیسہ کا ہو گیا







کراچی( اُردولائٹ اخبارتازہ ترین ۔ 29 جولائی 2022ء ) پاکستانی روپیہ نے امریکی ڈالر سمیت دیگر غیر ملکیوں کرنسیوں کے مقابلے بدترین گراوٹ کا شکا ر رہا جس کے باعث امریکی ڈالر اور دیگر غیر ملکی کرنسیاں ملکی تاریخ کی بلند ترین سطح پر جا پہنچی تھی۔ملک میں جاری سیاسی عدم استحکام کے باعث امریکی ڈالر کی اونچی اڑان اور پاکستانی روپے کے زوال کا سلسلہ جاری ہے۔15 دن میں پہلی بار ڈالر کی قیمت میں کوئی ہوئی ہے۔انٹربینک میں کاروبار کے اختتام پر ڈالر 57 پیسے سستا ہو کر 239 روپے 37 پیسہ کا ہو گیا۔انٹربینک کے کاروباری ہفتے میں ڈالر 11 روپے مہنگا ہوا۔اوپن مارکیٹ میں ڈالر ڈھائی روپے مہنگا ہو کر 245 روپے کا ہو گیا۔ جمعرات کو انٹر بینک میں ایک بار روپے کے مقابلے ڈالر4روپے مہنگا ہو کر241روپے پر جا پہنچا جبکہ اوپن مارکیٹ میں ڈالر4روپے کے اضافے سی245روپے کی ریکارڈ سطح پر پہنچا۔

فاریکس ڈیلر ز کے مطابق سیاسی عدم استحکام اور غیریقینی صورتحال کے سبب ڈالر تیزی کیساتھ مہنگا ہورہا ہے ریٹنگ ایجنسیوں کی جانب سے پاکستان کے آؤٹ لٴْک کی ریٹنگ کم کرنے اور عالمی مالیاتی فنڈکی جانب سے جاری ہونے والی قسط میں مبینہ تاخیر روپے کی قدرمیں گراوٹ کے اسباب ہیں ۔ فاریکس رپورٹ کے مطابق جمعرات کو انٹر بینک میں روپے کے مقابلے ڈالرکی قدر میں4روپے کا اضافہ ریکارڈکیا گیا جس سے ڈالر کی قیمت خرید 236روپے سے بڑھ کر240.41روپے اورقیمت فروخت237روپے سے بڑھ کر241روپے ہو گئی اسی طرح4.50روپے کے اضافے سے مقامی اوپن کرنسی مارکیٹ میں ڈالر کی قیمت خرید 237.50روپے سے بڑھ کر242روپے اور قیمت فروخت240.50روپے سے بڑھ کر245روپے پر جا پہنچی ۔فاریکس رپورٹ کے مطابق یورو کی قدر میں6.50روپے کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا جس سے یورو کی قیمت خرید 239روپے سے بڑھ کر245روپے اور قیمت فروخت241.50روپے سے بڑھ کر248.50روپے ہو گئی اسی طرح8روپے کے نمایاں اضافے سے برطانوی پونڈ کی قیمت خرید 284روپے سے بڑھ کر292روپے اور قیمت فروخت287روپے سے بڑھ کر295روپے پر جا پہنچی ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں